Home / آرٹیکلز / اس عورت سے خدا کی پناہ مانگو جو ۔۔۔؟ حکیم لقمان ؒ

اس عورت سے خدا کی پناہ مانگو جو ۔۔۔؟ حکیم لقمان ؒ

آستین سے کبھی بھی ناک صاف مت کرو۔ ہمیشہ پہلے کماؤ اور بعد میں خرچ کرو اور خرچ کرنے میں آمدنی کا لحاظ رکھا کرو۔ بے سوچے سمجھے کام شروع مت کیا کرو اور کام میں کبھی جلدی مت کرو۔ سب کاموں میں میانہ روی اختیار کیا کرو اور کام کو عقل اور تدبیر سے انجام نہ کرو۔ اپنا کام کسی عقلمند کو سپرد کرو ورنہ خود کرو اگر خود نہیں کر سکتے تو ترک کردو۔ تمہارا دستر خوان ہمیشہ نیک لوگوں کے لیے ہوتو بہتر ہے اور اپنی غذا دوسروں کے دستر خوان پر نہ کھایا کرو۔ اس جہان میں محنت ایسے کرو جیسے ہمیشہ یہیں رہنا ہو اور آخرت کے لیے ایسے مشقت کر و جیسے کل ہی مرجانا ہے۔

ہمیشہ کارخیر کے لیے مشقت کرتے رہو۔ عقل اد ب کے ساتھ ایسے ہے جیسا کہ پھل دار درخت۔ عقلمند کے لیے وہ وقت بہت مشکل ہوتا ہے جس کسی بات کا اظہار کے لی خرابی پید ا ہونے کا خوف ہو۔ کسب نہ کرنا محتاجی کا سبب بنتا ہے اور محتاجی دین کو تنگ کردیتی ہے۔ اس عورت سے خدا کی پناہ مانگو جو شریر او ر بری ہو۔ امانت دار بن جا، غنی ہوجائے گا او امانت کی ہمیشہ حفاظت کر۔ اگر لو گ تجھے اس صفت کے ساتھ موصوف بتلائیں جو کہ تیری ذات میں نہ ہو تو ان کی تعریف سے مغرور مت ہوجانا،

کیونکہ جاہلوں اور کم عقلوں کے کہنے سے ٹھیکری کبھی سونا نہیں بنا کرتی۔ مہمان کی مناسب خدمت کرو اورمہمان کے سامنے کسی پر خفا مت ہو اور نہ ہی مہمان کوکسی کو کام پر لگاؤ۔ ایک روایت میں ہے کہ حکیم لقمان کواُن کے آقا نے کہا کہ میرے لیے ایک بکری ذب ح کرو اور اُس کے سب سے بہترین گوش ت کے دو پارچے لے آئو۔انہوں نے بکری ذب ح کی اور زبان اور دل لے آئے،پھر اُس نے کہا کہ ایک اور بکری ذب ح کرو اور اُس کے دو انتہائی ناپسندیدہ پارچے لے آئو،وہ پھر زبان اور دل لے آئے ۔

اُن کے آقا نے ان سے کہا : میں نے پہلی بار گوش ت کے دو سب سے عمدہ اور دوسری بار دوسب سے خراب حصے مانگے اور تم دونوں بار زبان اور دل لے آئے ۔حکیم لقمان نے کہا: جب یہ دونوں درست ہیں تو اِن سے اچھی کوئی چیز نہیں اور جب اِن دونوں میں فساد آجائے تو اِن سے زیادہ بری کوئی چیز نہیں ۔یہی بات حدیث پاک میں بیان کی گئی ہے، آپ ﷺ نے فرمایا:”سنو!جسم میں گوش ت کا ایک لوتھڑا ہے ،جب وہ ٹھیک ہو تو پورا جسم ٹھیک رہتا ہے اور جب اس میں فساد آجائے تو پورے جسم میں فساد آجاتا ہے،سنو!وہ دل ہے‘‘۔اسی طرح رسول اللہﷺ نے فرمایا: ”جو مجھے دو چیزوں کی ضمانت دے، میں اُسے جنت کی ضمانت دیتا ہوں،ایک وہ جو دو جبڑوں کے درمیان ہے یعنی زبان اور دوسری وہ جو دو رانوں کے درمیان ہے یعنی شرم گاہ”۔

About admin

Check Also

رونا بڑی نعمت ہے

جاپان کے طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ ہفتے میں کم از کم ایک بار …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *